Sad Poetry

Sad poetry Ghazals are liked, read and loved by people all around the world, especially by those of whose thoughts and feelings are expressed in these ghazals and poetry. Here is the poetry liked and loved by such and also by other people.

 

Sad Poetry

چلتے رہیں گے قافلے میرے بعد بھی یہاں

اک ستارہ ٹوٹ جانے سے فلک تنہا نہیں ہوتا
Chalty Rahen Gy Qafily Mery Baad Bhi Yahan
Ik Sitara Toot Jany Sy Falak Tanha Nahi Hota
اجڑ چکا ہوں، تو کیا ہے، اس کا ملال کیسا
   محبتوں میں عروج کیسا، زوال کیسا
Ujar Chuka Hoon To, To Kiya Hai, Is Ka Malal Kaisa
Muhabbaton Mein Urooj Kaisa, Zawal Kaisa
یہ جانتے ہوٸے بھی گزاری ہے زندگی
ہم زندگی کے ہیں نہ ہماری ہے زندگی
Yeh Janty Huey Bhi Guzari Hai Zindagi
Hum Zindagi Kay Hain Naa Hamari Hai Zindagi
پھر یوں ہوا کہ صبر کی انگلی پکڑ کر ہم
     اتنا چلے کہ راستے حیران رہ گٸے
Phir Yoon Hua Kay Sabr Ki Ungli Pakar Kar Hum
Itna Chalay Kay Rasty Hairan Reh Gaey
میں ککھ گلیاں دی بن جاواں
  جے یار اُڑاوے پیراں نال
Main Kakh Galiyan Di Ban Jawan
Jy Yaar Urawy Pairan Naal
مجھے مجھ سے ملاتی جا رہی ہے
   فقیری راس آتی جا رہی ہے
Mujhy Mujh Say Milati Jaa Rahi Hai
Faqeeri Raas Aati Jaa Rahi Hai
مار دو بھلےجان سے، پر یہ سزا تو ہمیں نہ دو
    کہ ہمارے سامنے بیٹھو اور اجنبی لگو
Maar Do Bhaly Jaan Say, Par Yeh Saza To Humein Naa Do
Keh Hamary Samny Betho Aur Ajnabi Lago
ہر کوٸی یار نٸیں ہوندا بلھیا
کدی کلیاں بہ کے سوچ تے سہی
Har Koi Yaar Nai Honda Bulhiya
Kadi Kaliyan Beh Kay Soch Tay Sahi
جنھیں ہم سے شکایت ہو
انھیں کہنا، ملیں ہم سے
Jinhen Hum Say Shikayat Ho
Unhein Kehna, Milen Hum Say
غضب کی دھوپ تھی، تنہاٸیوں کے جنگل میں
   شجر بہت تھے مگر کوٸی سایہ دار نہ تھا
Ghazab Ki Dhoop Thi, Tanhayion Kay Jungle Mein
Shajar Bahot Thay Magar Koi Saya Daar Naa Tha
 کوٸی طلب نہیں باقی
کتنا امیر ہوگیا ہوں میں
Koi Talab Nahi Baqi
Kitna Ameer Ho Gaya Hon Mein

Sad Poetry

      تھوڑا سا سفر، بس تھوڑا سا

اس آس پہ بہت تھکادیا اے زندگی تو نے
Thora Saa Safar, Bas Thora Saa
Is Aas Peh bahot Thaka Diya, Aey Zindagi! Tu Nay
وقت برا نہیں ہوتابس
 کچھ لوگ وقتی ہوتے ہیں
Waqt Bura Nahi Hota, Bas
Kuch Log Waqti Hoty Hain
اس شہرِ کم ظرف کی عجب ریت ہے اے دل!
     مٹی کے بھاٶ بکتے ہیں کندن مثال لوگ
  Is Shehr E Kam Zarf Ki Ajab Reet Hai Aey Dil!
Matti Kay Bhaao Bikty Hain, Kundan Misaal Log
کوٸی آہٹ، کوٸی جنبش، کوٸی دستک  نہیں ملتی
   ہمارے شہرِ ویراں میں بڑی فرصت کا موسم ہے
Koi aahat, Koi Janbish, Koi Dastak Nahi Milti
Hamary Shehr E Weeraan Mein Bari Fursat Ka Mosam Hai
ٹوٹ بھی جاٶں تو تیرا کیا ہے
ریت سے پوچھ آٸینہ کیا ہے
پھر میرے سامنے اس کا ذکر
آپ کے ساتھ مسٸلہ کیا ہے
Toot Bhi Jaun To Tera Kiya Hai
Tait Say Puch Aaina Kiya Hai
Phir Mery Saamny Us Ka Zikr
Aap Kay Sath Mas’ala Kiya Hai

 

Leave a Comment

close